crossorigin="anonymous"> ڈیڑھ ماہ میں 18ارب ڈالرز مالیت کا پانی سمندر کی نذر - societynewspk

ڈیڑھ ماہ میں 18ارب ڈالرز مالیت کا پانی سمندر کی نذر

ڈیڑھ ماہ میں 18 ارب ڈالرز مالیت کا پانی سمندر کی نذر

اسلامآباد(سوسائٹی نیوز)

سیلابی پانی کو زراعت صنعت اور کمرشل استعمال میں لانے کے لیے جھوٹے بڑے آبی ذخائر نہ ہونے صرف ڈیڑھ ماہ کے قلیل عرصے میں 18 ارب ڈالر سے زائد مالیت کا پانی سمندر کی نظر ہوگیا۔

مختلف حکومتی اداروں کے اعداد و شمار کے مطابق 16 جولائی سے 3 ستمبر تک صرف دریائے سندھ میں آنے والے سیلاب سے اربوں روپے کا نقصان ہو چکا ہے، اس دوران ڈاؤن اسٹریم کوٹری سے روزانہ ایک لاکھ 86 ہزار 131 ملین ایکڑ فٹ پانی سمندر کی نظر ہو چکا ہے۔

اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ مجموعی طور پر ڈیڑھ ماہ کے عرصہ میں 18 اعشاریہ 642 ملین ایکڑ فٹ پانی سمندر میں چلا گیا جب کہ پاکستان میں مجموعی طور پر پانی ذخیرہ کرنے کی گنجائش 13 اعشاریہ 64 ملین ایکڑ فٹ ہے یعنی پاکستان میں ذخیرہ کرنے سے بھی تین ملین ایکڑ فٹ زیادہ پانی سمندر میں چلا گیا ہے۔

آبی ماہر ڈاکٹر محسن عزیز نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ملک میں صوبوں کے درمیان سیلابی پانی کی تقسیم کا باقاعدہ فارمولا موجود ہے مگر اس سیلابی پانی کو ذخیرہ کرنے کے لیے چھوٹے بڑے ڈیمز بنائے ہی نہیں گئے پانی کا تخمینہ لگانے کے لیے ایک فارمولا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایک ملین ایکڑ فٹ پانی کو زراعت انڈسٹری اور کمرشل استعمال میں لائیں تو اس سے ایک ارب ڈالر قیمت بنتی ہے اس حساب سے اب تک 18 ارب ڈالر کا قیمتی پانی سمندر کی نظر ہوچکا ہے جب کہ پاکستان میں پینے کے پانی کی سطح بھی بڑی تیزی کے ساتھ کم ہو رہی ہے۔

مکمل پڑھیں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button